نظم خمستان ازل کا ساقی میں شاعر کے مطابق انسان سراپا کیا ہے۔

جھوٹ

معصیت

خطاپوش

گناہگار